افواجِ پاکستان کا سیلاب متاثرہ علاقوں میں ریلیف آپریشن جاری

نیشنل فلڈ ریلیف کوآرڈینیشن سینٹر (این ایف آر سی سی) کی رپورٹ کے مطابق پاک فوج، پاک فضائیہ اور پاک بحریہ کی جانب سے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں ریلیف آپریشن مسلسل جاری ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاک بحریہ کے چار فلڈ ریلیف سینٹرز اور 18 سینٹرل کلیکشن پوائنٹس نے 1805 ٹن سے زائد خوراک، 6553 خیمے اور 7,35,263 لیٹر مِنرل واٹر سیلاب سے متاثرہ لوگوں میں تقسیم کیا۔

نیشنل فلڈ ریلیف کوآرڈینیشن سینٹر کے مطابق کم از کم 25,973 افراد نے پاک بحریہ کے 22 کیمپوں میں پناہ لے رکھی ہے۔ پاکستان بحریہ 23 ایمرجنسی ریسپانس ٹیموں نے اب تک تقریباً 15,568 افراد کی جانیں بچائی ہیں۔

پاک بحریہ کی ایمرجنسی ریسپانس ٹیموں کے پاس 54 موٹرائزڈ بوٹس، اور 2 ہوور کرافٹس ہیں، جبکہ دو ہیلی کاپٹر سندھ میں لوگوں کو ریسکیو کرنے کے لیے تفویض کیے گئے ہیں۔

این ایف آر سی سی نے بتایا کہ پاک بحریہ کے ہیلی کاپٹرز کی 70 پروازوں کے ذریعے کُل 479 افراد کی جانیں بچائی گئی ہیں جبکہ 5333 راشن بیگ بھی تقسیم کیے گئے ہیں۔

پاکستان نیوی نے 86 میڈیکل کیمپ بھی قائم کیے جن میں اب تک 1,08,990 سے زیادہ مریضوں کا علاج کیا جا چکا ہے۔

رپورٹ کے مطابق پاک فضائیہ کی جانب سے اب تک سیلاب متاثرین میں 6583 خیمے اور 5,70,341 سے زائد خوراک کے پیکٹ تقسیم کیے گئے۔ ٹیموں نے 3353.26 ٹن خوراک اور 287,183 لیٹر منرل واٹر بھی تقسیم کیا۔

پاک فضائیہ نے 46 میڈیکل کیمپ قائم کیے جن میں 72,228 مریضوں کا علاج کیا گیا۔ جبکہ 19,807 افراد نے پاک فضائیہ کے قائم کردہ 20 کیمپوں میں پناہ لی۔

نیشنل فلڈ رسپانس کوآرڈینیشن سینٹر (این ایف آر سی سی) نے کہا کہ آرمی ایوی ایشن کے ہیلی کاپٹروں نے سیلاب سے بچاؤ کی کارروائیوں کے لیے 625 پروازیں کیں اور سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں پھنسے ہوئے 4,659 افراد کی جانیں بچائیں۔

این ایف آر سی سی کی رپورٹ کے مطابق سیلاب زدگان میں 1807.02 ٹن خوراک تقسیم کی گئی ہے۔ ملک بھر میں کُل 147 ریلیف کیمپ، 300 سے زیادہ میڈیکل کیمپ، اور 172 ریلیف اکٹھا کرنے کے پوائنٹس قائم کیے گئے ہیں۔ میڈیکل کیمپوں میں اب تک 6,19,808 سے زائد افراد کا علاج کیا جا چکا ہے اور مریضوں کو 5 دن کی ادویات بھی فراہم کی جا رہی ہیں۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

About Rizwan Ali Shah

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے