کے ٹو کا حُسن، کچرے سے ماند پڑنے لگا

K2 NI

کمرشل سرگرمیوں اور غیر پیشہ ورانہ رسائی کی وجہ سے پاکستان کی سب سے اونچی اور دنیا کی دوسری بلند ترین چوٹی کے ٹو کچرے کا پہاڑ بنتی جا رہی ہے۔

ہر کوہ پیما کے لیے کم از کم 2 پانی کی بوتلیں، خیمے، خوراک اور 2 افراد پر مشتمل معاون عملہ ساتھ ہوتا ہے۔ اس کے علاوہ انسانی فضلہ بھی کے ٹو کی نظر ہوتا ہے۔

سوشل میڈیا پلیٹ فارم کے ذریعے کے ٹو کے چاہنے والوں کی طرف سے یہ درخواست دی جا رہی ہے کہ پائیدار سیاحت اور بہترین ماحولیات کے لیے کمرشل لباس پر پابندی عائد کی جائے، جسے صرف پیشہ ورانہ لوگوں کے لیے مخصوص کیا جانا چاہیئے۔

 

کے ٹو کا حُسن، کچرے سے ماند پڑنے لگا

 

کے ٹو دنیا کی دوسری بلند ترین چوٹی ہے جو پاکستان میں کوہ قراقرم کے پہاڑی سلسلے میں واقع ہے۔ پاکستان میں موجود کے ٹو کی یہ بلند ترین چوٹی 8611 میٹر، 28251  فٹ اونچی ہے جسے سَر کرنے کی خواہش متعدد کوہ پیما اور سیاح دل میں لیے بیٹھے ہیں۔

پاکستان کے معروف کوہ پیما محمد علی سدپارہ، گزشتہ برس فروری میں کے ٹو سَر کرتے ہوئے اپنے غیر ملکی ساتھی کوہ پیماؤں کے ہمراہ جان سے ہاتھ دھو بیٹھے تھے۔

 

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے