پراپرٹی ٹرانسفر سمیت دیگر سروسز کی فیس میں اضافہ کر دیا گیا: ایل ڈی اے

لاہور ڈویلپمنٹ اتھارٹی (ایل ڈی اے) نے پراپرٹی ٹرانسفر، این او سی، نقشہ کی منظوری اور دیگر سروسز کی فیسوں میں اضافہ کر دیا۔

ایل ڈی اے حکام کے مطابق وزیراعلیٰ پنجاب کی زیرصدارت حالیہ اجلاس میں متعدد سروسز جیسے کہ جائیداد کی منتقلی، این او سی، نقشہ کی منظوری اور دیگر سروسز کی فیسوں میں اضافے کی منظوری دی گئی۔ علاوہ ازیں قواعد و ضوابط کی خلاف ورزی پر جرمانے کی رقم میں اضافے کی سمری بھی پیش کی گئی جو منظور کر لی گئی۔

مجوزہ سمری میں میں وضاحت کی گئی کہ ایل ڈی اے کی جانب سے فیس، جرمانے اور جرمانے کی شرح میں گزشتہ آٹھ سالوں سے نظر ثانی نہیں کی گئی تھی جبکہ دیگر سرکاری محکمے جیسے کہ ایکسائز اینڈ ٹیکسیشن اور سٹی ڈسٹرکٹ گورنمنٹ جائیداد کی موجودہ قیمت کے مطابق ٹیکس یا چارجز وصول کر رہے ہیں، جس میں سالانہ بنیادوں پر اضافہ کیا جاتا ہے۔

حکام نے بتایا کہ مجوزہ سمری میں یہ لکھا گیا کہ تقریباً گذشتہ آٹھ سالوں اور بالخصوص گذشتہ دو مالیاتی سالوں کے دوران کورونا کی عالمی وبا کے خاتمے کے بعد مہنگائی میں مسلسل اضافہ ہوا۔ مہنگائی میں مسلسل اضافے کی وجہ سے ایل ڈی اے کے آپریشنل اخراجات میں کئی گنا اضافہ ہوا جس کی وجہ سے سروسز کی فیسوں میں اضافے کی ضرورت پیش آئی۔

مجوزہ سمری کے مطابق فیسوں کو معقول بنانے سے ایل ڈی اے کو کمرشل پراپرٹیز سے ریونیو بڑھانے میں مدد ملے گی۔ اضافی فنڈز کو لاہور کے انفراسٹرکچر کی ترقی کے لیے استعمال کیا جائے گا۔

حکام نے بتایا کہ وہ سروسز جن پر فیسوں میں اضافہ کیا گیا ان میں جائیداد کی منتقلی، تحفتاً دی گئی جائیداد کی منتقلی، قانونی ورثاء کی منتقلی، این او سی، جنرل پاور آف اٹارنی، عمارت کی مدت میں توسیع، قبضہ، عمارت کے پلان کی منظوری، پلاٹوں کی ذیلی تقسیم، پلاٹوں کا امتزاج، عمارت کی بلندی کے اضافی چارجز اور عمارت کے تکمیلی سرٹیفیکیٹس کے اجراء کی فیسیں شامل ہیں۔ علاوہ ازیں عمارت کے تعمیراتی قوانین کی خلاف ورزیوں پر جرمانوں میں بھی اضافہ کیا گیا۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

About Rizwan Ali Shah

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے