سیلاب 2022: لاکھوں بیمار افراد اور حاملہ خواتین کے متاثر ہونے کا خدشہ

flood illness NI

اسلام آباد: ماہرین صحت اور فلاحی اداروں کے مطابق سیلاب زدہ علاقوں میں لاکھوں افراد کے بیمار ہونے کا خدشہ ہے۔ سیلاب سے پیدا ہونے والی متعدد بیماریوں کے پیشِ نظر لاکھوں افراد آلودہ پانی اور حشرات سے پھیلنے والی بیماریوں کا شکار ہو رہے ہیں۔

 

وائس چانسلر ہیلتھ سروسز اکیڈمی ڈاکٹر شہزاد علی خان کے مطابق پاکستان میں سیلاب سے اب تک 3 کروڑ سے زائد افراد متاثر ہوئے ہیں۔ آنے والے چند ہفتوں میں لاکھوں افراد آلودہ پانی اور مچھروں سے پھیلنے والی بیماریوں سے متاثر ہوں گے۔ ڈاکٹر شہزاد علی خان کا کہنا ہے کہ سیلابی علاقوں میں ٹائیفائیڈ اور ہیضے کی مشترکہ ویکسین ہر شخص کو لگائی جانی چاہیئے۔

 

اقوامِ متحدہ کے تولیدی صحت کے ادارے پاپولیشن فنڈ (یو این ایف پی اے) کے مطابق رواں برس سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں لاکھوں حاملہ خواتین ہیں۔ جن میں سے آئندہ ماہ 73 ہزار کے ہاں ولادت متوقع ہے۔ ان خواتین کو فوری دیکھ بھال اور طبی بنیادوں پر امداد کی ضرورت ہے۔

 

سیلاب 2022: لاکھوں بیمار افراد اور حاملہ خواتین کے متاثر ہونے کا خدشہ

 

ماہر امریکی سینٹر فار ڈیزیز کنٹرول کے مطابق سیلابی علاقوں میں ڈینگی، ملیریا، خسرہ اور پولیو پھیلنے کے امکانات کئی گنا بڑھ گئے ہیں۔ جبکہ سیلاب سے متاثرہ بچوں میں بھی ویکسینیشن کے لیے فوری اقدامات کی ضرورت ہے۔

غور طلب امر یہ ہے کہ غذائی قلت کا شکار بے گھر متاثرین میں بیمار افراد، خواتین اور بچوں کے لیے ہنگامی بنیادوں پر دوائیں درکار ہیں۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔