پاکستان اور چین کا ایم ایل 1 منصوبے کا آغاز کرنے پر اتفاق

پاکستان اور چین نے سی پیک کے تحت بننے والے اربوں روپے لاگت پر مشتمل ایم ایل 1 منصوبے کا آغاز کرنے پر اتفاق کر لیا۔

حکام کے مطابق چین اور پاکستان کے مابین یہ معاہدہ گذشتہ روز چین پاکستان اقتصادی راہداری (سی پیک) کی 11ویں مشترکہ تعاون کمیٹی کے اجلاس میں ویڈیو کانفرنس کے ذریعے طے پایا گیا۔

اجلاس کی مشترکہ صدارت وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی ترقی احسن اقبال اور چین کے نیشنل ڈویلپمنٹ اینڈ ریفارم کمیشن (این ڈی آر سی) کے وائس چیئرمین لین نین شیو نے کی۔ مشترکہ تعاون کمیٹی کے اجلاس کا انعقاد وزیرِاعظم شہباز شریف کے آئندہ دورہ چین کو مدِنظر رکھتے ہوئے کیا گیا جس میں تمام اہم ایم او یوز پر باضابطہ دستخط کیے جائیں گے۔

حکام کے مطابق کراچی سرکلر ریلوے پر بھی طویل بحث کی گئی جس سے کراچی کی آبادی کا ایک بڑا حصہ مستفید ہو گا۔ اس منصوبے کو لاہور اورنج لائن میٹرو ٹرین پروجیکٹ کی طرز پر G2G انتظامات کے تحت لاگو کرنے کی تجویز دی گئی۔

دونوں ملکوں نے کان کنی کے شعبے میں نئے راستے تلاش کرنے پر اتفاق کیا اور اس کے لیے ایک نیا ورکنگ گروپ تشکیل دینے کا فیصلہ کیا گیا۔

حکام نے بتایا کہ زرعی شعبے میں تعاون پر بھی تبادلہ خیال کیا گیا جو کہ سی پیک کے دوسرے مرحلے کے ضروری عوامل میں سے ایک ہے۔ حکام کا کہنا تھا کہ پاکستان نے چین میں پاکستانی زرعی اشیاء کی برآمد کو فروغ دینے کے لیے کچھ معاہدوں کو حتمی شکل دی ہے جس کے لیے ان مصنوعات کے دائرہ کار کو کافی حد تک بڑھانے کی ضرورت ہے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

About Rizwan Ali Shah

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے