اسٹیل میکرز کی حکومت سے ترقیاتی فنڈز جاری کرنے کی درخواست

پاکستان ایسوسی ایشن آف لارج اسٹیل پروڈیوسرز نے حکومت سے درخواست کی ہے کہ پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ فنڈز (پی ایس ڈی پی) بِنا کسی تاخیر کے جاری کیے جائیں تاکہ اسٹیل کی صنعت میں استحکام لایا جا سکے۔

پاکستان ایسوسی ایشن آف لارج اسٹیل پروڈیوسرز (پی اے ایل ایس پی) نے حکومت سے اپیل کی ہے کہ وہ عوامی شعبے کے ترقیاتی پروگرام (پی ایس ڈی پی) کے فنڈز بغیر کسی تاخیر کے جاری کرے تاکہ غیرمعمولی سیلاب کی وجہ سے ہونے والی بڑے پیمانے پر تباہی کے بعد صنعت کے ساتھ ساتھ معیشت میں بھی بہتری لائی جا سکے۔

ایسوسی ایشن کا کہنا ہے کہ اس سے معاشی ترقی کو تیز کرنے میں مدد ملے گی، روزگار کے مواقع پیدا ہوں گے اور ملک کی پوری صنعت میں بہتری آئے گی۔

حکام کے مطابق مالی سال 2022 تا 2023 میں حکومت نے وفاقی ترقیاتی بجٹ میں پی ایس ڈی پی کے تحت 8 کھرب کا بجٹ مختص کیا تھا۔ تاہم  رواں مالی سال کی پہلی سہ ماہی میں حکومت نے فنڈز کے اجراء میں کمی کرتے ہوئے محض 80 ارب روپے جاری کیے۔

علاوہ ازیں مالی سال 2021 تا 2022 کی آخری سہ ماہی میں پی ایس ڈی پی کی مد میں کوئی رقم جاری نہیں کی گئی۔ مذکورہ صورتحال کے نتیجے میں تمام سرکاری منصوبوں کا ترقیاتی کام تقریباً رک گیا۔

اسٹیل میکرز کا کہنا ہے کہ اسٹیل کی صنعت کا بڑا حصہ تعمیر ہونے والے حکومتی منصوبوں سے منسلک ہے جس میں ہائی ویز، ڈیمز، ائیرپورٹ دفاتر وغیرہ کی تعمیر شامل ہے۔

علاوہ ازیں تباہ کن سیلاب کے بعد، سڑکوں کو شدید نقصان پہنچا ہے جس سے سٹیل کی نقل و حمل میں خاصی مشکلات کا سامنا ہے۔ جس کے باعث اسٹیل کی نقل و حمل کے اخراجات میں اضافہ ہوا۔ پاکستان ایسوسی ایشن آف لارج اسٹیل پروڈیوسرز کا کہنا ہے کہ موجودہ صورتحال میں اسٹیل کی مصنوعی قلت پیدا ہونے کا امکان ہے۔

اسٹیل میکرز نے حکومت سے اپیل کی کہ پبلک سیکٹر ڈویلپمنٹ فنڈز جلد از جلد جاری کیے جائیں تاکہ ترقیاتی منصوبوں کی تعمیر کے عمل میں رکاوٹ پیش نہ آئے اور اسٹیل کی صنعت عدم استحکام کا شکار نہ ہو۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

About Rizwan Ali Shah

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے