پولینڈ کی جیولین سٹار نے اپنا میڈل بچے کی ہارٹ سرجری کے لیے نیلام کر دیا

Maria NI

کہتے ہیں نیکی کر دریا میں ڈال، لیکن اگر وہ نیکی دریا سے نکل کر واپس آپ کے ہاتھ میں آ جائے تو کیا ہی بات ہے۔ یہ کوئی مذاق نہیں، نہ ہی کسی فلم کی کہانی ہے۔ بلکہ حال ہی میں اس دنیا میں ہونے والا ایک سچا واقعہ ہے۔

ٹوکیو اولمپکس کی تمغہ جیتنے والی ماریا اینڈریجک نے اپنے چاندی کے تمغے کو ایک بچے کے دل کی سرجری میں مدد کے لیے نیلام کیا تھا۔

چاندی کا تمغہ جیتنے والی ماریا اینڈریجک جو کہ ایک جیولین کھلاڑی ہیں، اور ٹوکیو اولمپکس میں سلور میڈل جیت چکی ہیں۔

انہوں نے اپنا میڈل 1 لاکھ 25 ہزار ڈالر میں نیلام کیا تاکہ ان کے آبائی علاقے پولینڈ میں ایک شیر خوار بچے کی دل کی سرجری میں مدد کر کے اس کی زندگی بچائی جا سکے۔

پولینڈ کی جیولن پھینکنے والی ماریا اینڈریجک نے اپنے ملک میں آٹھ ماہ کے بچے کے دل کی سرجری کے لیے فنڈز فراہم کرنے کے تحت یہ نیک کام سر انجام دیا۔

پولینڈ کی جیولین سٹار نے اپنا میڈل بچے کی ہارٹ سرجری کے لیے نیلام کر دیا

 

لیکن ہوا کچھ یوں کہ پولینڈ ابکا پولسکا کی سہولت اسٹوری کمپنی نے ماریہ کا سلور میڈل نیلامی میں 1 لاکھ 25 ہزار ڈالر کے عوض خرید کر جیولین سٹار کو اس کا میڈل واپس کر دیا۔ جبکہ شیر خوار بچے کی سٹینفورڈ یونیورسٹی میں سرجری کی جائے گی۔

ماریا اینڈریجک نے 64.61 میٹر کے تھرو کے ساتھ چاندی کا تمغہ جیتا تھا جبکہ آسٹریلیا کی کیلسی لی باربر نے 64.56 کے ساتھ کانسی کا تمغہ جیتا تھا، جو ان کی سیزن کی بہترین کارکردگی تھی۔ وہ صرف چین کے لیو شیئنگ سے پیچھے تھی جنہوں نے 66.34 میٹر کا فاصلہ پھینک کر طلائی تمغہ جیتا۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔