سیلاب زدہ علاقوں میں کسانوں کو ورلڈ بینک کا 9 کروڑ 60 لاکھ ڈالر کا عطیہ

ورلڈ بینک نے سیلاب زدہ علاقوں میں زرعی زمین کی ازسرِنو آبادکاری کے لیے کسانوں کو 9 کروڑ 60 لاکھ ڈالر کی رقم دینے پر رضامندی ظاہر کر دی۔

حکام کے مطابق ورلڈ بینک یہ رقم لوکسٹ ایمرجنسی اینڈ فوڈ سیکیورٹی پروجیکٹ میں سے کسانوں کو ادا کرے گا۔ پراجیکٹ کی تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئے حکام کا کہنا تھا کہ ورلڈ بینک نے حکومت کو مذکورہ پروگرام کے تحت 20 کروڑ ڈالر کا قرضہ فراہم کیا تھا۔

حکام کا کہنا ہے کہ یہ پروجیکٹ اصل میں ٹڈی دل سے متاثرہ علاقوں میں ٹڈی دل کے حملے پر قابو پانے اور اس کو کم کرنے کے لیے شروع کیا گیا تھا۔ تاہم، پروجیکٹ کے آغاز سے قبل ٹڈی دل پر دسمبر 2020ء میں قابو پا لیا گیا تھا۔ چونکہ یہ پروگرام شروع نہیں کیا گیا تھا اس لیے 20 کروڑ ڈالر میں سے حکومت نے 10 کروڑ 40 لاکھ ڈالر ورلڈ بینک کے حوالے کر دیے تھے۔

مون سون کی بارشوں کی وجہ سے آنے والے سیلاب اور اس کی تباہ کاریوں کے پیشِ نظر لوکسٹ ایمرجنسی اینڈ فوڈ سیکیورٹی پروجیکٹ کے دائرہ کار پر نظر ثانی کرنے کا فیصلہ کیا گیا جس کے تحت ورلڈ بینک کی جانب سے دی گئی 9 کروڑ 40 لاکھ ڈالر کی رقم سیلاب زدہ علاقوں میں کسانوں کو بیج کی فراہمی اور زرعی زمین کو ازسرِنو آباد کرنے کے لیے استعمال کی جائے گی۔

حکام کا کہنا ہے کہ سیلاب زدہ علاقوں میں زرعی زمین کی آباد کاری کے منصوبے پر تقریباً 11 کروڑ 40 لاکھ ڈالر لاگت آئے گی جس میں عالمی بینک اہم شیئر ہولڈر ہے۔ ورلڈ بینک کی جانب سے 9 کروڑ 60 لاکھ ڈالر فراہم کیے جائیں گے جبکہ باقی 1 کروڑ 80 لاکھ ڈالر کی رقم حکومتِ پاکستان فراہم کرے گی۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ۔

About Rizwan Ali Shah

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے