سی ڈی ڈبلیو پی نے 16.1 ارب کے منصوبوں کی منظوری دے دی

اسلام آباد: سینٹرل ڈویلپمنٹ ورکنگ پارٹی نے جمعرات کے روز 4 پراجیکٹس کی منظوری دے دی جن کی لاگت 16.1 ارب روپے ہوگی اور اس کے ساتھ 44.2 ارب کے 2 مزید منصوبوں کی سمری قومی اقتصادی کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی کو ارسال کردی۔

یہ فیصلے پلاننگ کمیشن کے ڈپٹی چیئرمین جہانزیب خان کے زیرِ صدارت اجلاس میں ہوئے۔

اجلاس میں ایڈیشنل سیکرٹری پلاننگ حمیر کریم، پلاننگ کمیشن کے سینئر افسران اور صوبائی و مرکزی وزارتوں کے متعلقہ افسران نے بھی شرکت کی۔

اجلاس میں توانائی، ثقافت، کھیلوں، سیاحت، مواصلات، خوراک، زراعت اور گورننس سے متعلق منصوبے پیش کیے گئے۔

اجلاس میں لاہور کے شاہی قلعے اور اُس کے بفر زون کے لیے ثقافتی کھیلوں کے پراجیکٹ کی منظوری دی گئی جس کی لاگت 3.7 ارب روپے ہوگی۔

علاوہ ازیں جاگرن ہائیڈرو پاور اسٹیشن کے فیز 11 کی سمری قومی اقتصادی کونسل کی ایگزیکیٹیو کمیٹی کے پاس بھیجی گئی۔ اس پراجیکٹ کی لاگت 11.4 ارب روپے ہوگی اور اس سے 48 میگاواٹ بجلی پیدا ہوگی۔

منظور شدہ منصوبوں میں 1.5 ارب لاگت کے پسنی فش ہاربر پراجیکٹ اور 7.8 ارب لاگت کے کراچی شپ یارڈ اینڈ انجینئرنگ ورکس لمیٹڈ کی انفراسٹرکچر اپ گریڈیشن شامل ہیں۔

تیسرا منظور شدہ پراجیکٹ زیارا سے ڈبوری تک سڑک کی تعمیر کا ہے۔

ایک منصوبہ منظوری کے لیے ایکنک بھیجا گیا جو کہ لوکسٹ ایمرجنسی اور فوڈ سیکیورٹی سے متعلق ہے۔ اس کی لاگت 32.8 ارب روپے ہے اور یہ چاروں صوبوں کے 18 اضلاع میں عمل میں لایا جائے گا۔

وزارتِ منصوبہ بندی کے ترجمان کا کہنا ہے کہ اس پراجیکٹ کا مقصد ٹڈی دل پر قابو پانا اور فوڈ سیکیورٹی کو بڑھانا ہے اور یہ کہ ٹڈی دل کے حملے سے منسلک منفی معاشی و معاشرتی اثرات کو کم کیا جا سکے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کے لیے وزٹ کیجئے گرانا بلاگ۔

About Maham Tahir

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔