ای سی پی کی سندھ کو ہاؤسنگ اور شمسی توانائی کے منصوبے جاری رکھنے کی ہدایت

کراچی: الیکشن کمیشن آف پاکستان (ای سی پی) نے واضح کیا ہے کہ سندھ میں جاری ترقیاتی منصوبوں پر کوئی پابندی نہیں ہے۔ اس میں سیلاب سے متاثرہ خاندانوں کے لیے 20 لاکھ گھروں کی تعمیر اور 21 لاکھ گھروں پر سولر پینلز کی تنصیب شامل ہے، تاکہ بجلی کی کمی کو پورا کیا جا سکے۔

IMARAT Downtown

Islamabad’s emerging city centre

Register Now

تفصیلات کے مطابق سندھ کے چیف سیکریٹری کو لکھے گئے خط میں، ای سی پی نے اس بات پر زور دیا کہ ورلڈ بینک کی جانب سے فنڈز فراہم کیے جانے والے اور قومی اقتصادی کونسل کی ایگزیکٹو کمیٹی (ایکنک) سے منظور شدہ منصوبوں پر کسی قسم کی پابندی نہیں ہے۔ یہ وضاحت ای سی پی کی جانب سے ترقیاتی فنڈز منجمد کرنے کے حوالے سے اٹھائے گئے حالیہ خدشات کے جواب میں سامنے آئی ہے۔

لہٰذا ای سی پی کے سیکریٹری عمر حامد خان کے دستخط شدہ خط میں کہا گیا ہے کہ سندھ سولر انرجی پروجیکٹ پر کوئی پابندی نہیں ہے، جسے 14 نومبر 2018 کو ایکنک نے منظور کیا تھا۔

اس میں کہا گیا ہے کہ "سندھ فلڈ ایمرجنسی ہاؤسنگ ری کنسٹرکشن پراجیکٹ پر کوئی پابندی نہیں ہے، جس کی منظوری ایکنک نے جنوری 2023 میں دی تھی۔ اور ان منصوبوں کے تحت، اس وقت متعدد سرگرمیاں مرحلہ وار کی جا رہی ہیں۔”

مزید برآں، ای سی پی نے اس بات پر روشنی ڈالی کہ عالمی بینک، یو ایس ایڈ جیسی تنظیموں اور مختلف ترقیاتی شراکت داروں کی جانب سے کثیر جہتی بینکوں پر کسی قسم کی پابندی نہیں ہے، بشرطیکہ انہیں مناسب منظوری مل گئی ہو۔

اس کے علاوہ، سولر پینل پراجیکٹ کا مقصد لوڈ شیڈنگ کے مسائل کو حل کرکے اور بجلی کے بلوں کو کم کرکے کم آمدنی والے خاندانوں کو ریلیف فراہم کرنا ہے۔ جبکہ ہاؤسنگ پراجیکٹ سیلاب میں ضائع ہونے والے 20 لاکھ گھروں کی تعمیر نو پر توجہ مرکوز کرتا ہے۔

مزید خبروں اور اپڈیٹس کیلئے وزٹ کیجئے گرانہ بلاگ

IMARAT Downtown

Best Offers Islamabad’s emerging city
centre
Register Now
Scroll to Top
Scroll to Top